Publish Date : 2017-11-16

سمیع القاسم کی عربی نظموں کے تراجم

دیدبان شمارہ ششم 

 

سمیع القاسم کی عربی نظموں کے تراجم 

اردو ترجمہ : افتخار بخاری

موت کےلئے ایک کام
۔
 
ان قبروں پر 
سیلن جن کی
ہزار برس سے 
آنسو مجھے رلاتی ہے 
حکم امیر شہر کے بل پر
باب رزق کھلا رہتا ہے 

اندھے مجاور 
اور لفظوں کے سوداگر
پلتے ہیں..... 
دستک دے اے موت! 
ذرا دروازوں پر 
میرے پاس اک کام ہے 
تیرے کرنے کا !! 

                 سمیع القاسم، فلسطین، عربی
                         ترجمہ، افتخار بخاری

حیات نو 
۔ 

اک دن میرے بال و پر 
پھر اگ آئیں گے 
لوٹ آئے گی
دور پڑے وقتوں سے
چڑیا
جو مقتل سے اڑی تھی 
جس نے کہا تھا
لمحہ لگے یا صدیاں 
لیکن میرا جسم 
یہ مجھ سے کہتا ہے 
یہ خون آلودہ ریشے
وطن کا شہپر بن جائیں گے ! 

                سمیع القاسم، فلسطین، عربی 
                          ترجمہ، افتخار بخاری
مایوسی 

میں وقت میں 
چلتے چلتے رکا
تا کہ بچوں کی خاطر 
خریدوں 
میں کچھ روٹیاں 
اور گزر بھی گئے
جانے کتنے برس..... 
اور میرے لئے 
وقت بد قسمتی بن گیا
تھے مرے ہاتھ میں پیسے
پر ہنسنے والوں نے دیکھا 
انہیں غور سے، 
اور بولے کہ اے غم زدہ ! 
اب تو سکے ہمارے 
بدل. بھی چکے ہیں !! 
                  
         سمیع القاسم، فلسطین، عربی 
                      ترجمہ،  افتخار بخاري



Category : Translation
Author : افتخار بخاری

DEEDBAN

Deedban Publications | N-103 Jamia Nagar New Delhi | Tel: +(91)-9599396218 | Email: deedban.adab@gmail.com
The copyright to all contents of this site is held by the authors of this site. Any kind of reproduction would be an infringement.